A poor farmer married to very beautiful woman. The biggest cause of female beauty had long thick black hair, which she was not just about her, but both of them.

One day the farmer’s wife said to her husband, “Bring a comb shop enroute to the total return, because hair trimmed to make them to grow long and thick it is very important. And then in how neighbors Combs will have ordered? “

Farmers apologized to his wife and said, “Mrs. mine is broken for a long time strayp his watch, I do not have so much money that I get then I’m good comb can get on. You some days I spent comb more neighbors, when the money will gather … “ I forced my husband to wife

It was not much repetition.

Farmers made up his then wife, then cursed himself within it, I am so unfortunate that I can not fulfill a wish of his wife. Other fields was a clock shop and sold the farmer to return your broken clock ione Distress and meet her money and bought a nice little hair left the house to hide from the big secret.

He thought he’d surprise his wife, he will be very happy. When he got home he saw his wife had been cut her long hair. And was smiling at his side. Farmers asked her, “she This is why you were cut off your hair, do they look so cute on you?”

She said, “My lord, yesterday when you said that I was very sad when you have no money to get the right time. It was close to the beauty parlor today, there your hair with this one for you I have time! “ When the farmer’s eyes were moist waste both emotions shown by the comb.

Love is not just something to give and take, but love is a sacrifice and selflessness which often only offered to the wishes and feelings of the sacred bonds of love.

‎ایک غریب کسان کی شادی نہایت حسین و جمیل عورت سے ہو گئی۔ اُس عورت کے حُسن کی سب سے بڑی وجہ لمبے گھنے سیاہ بال تھے، جن کی فکر صرف اُسے ہی نہیں بلکہ اُن دونوں کو رہتی تھی۔

‎ایک دِن کسان کی بیوی نے اپنے شوہر سے کہا کہ، “کل واپسی پر آتے ہوئے راستے میں دُکان سے ایک کنگھی تو لیتے آنا، کیونکہ بالوں کو لمبے اور گھنے رکھنے کیلئے اُنہیں بنانا سنوارنا بہت ضروری ہے۔ اور پھر میں کتنے دِن ہمسائیوں سے کنگھی منگواتی رہونگی۔۔۔؟”

‎غریب کسان نے اپنی بیوی سے معذرت کر لی اور بولا، “بیگم! میری تو اپنی گھڑی کا سٹرایپ کافی دِنوں سے ٹوٹا ہوا ہے، میرے پاس اتنے پیسے نہیں ہیں کہ اُسے ٹھیک کروا سکوں، تو میں بھلا کنگھی کیسے لا سکتا ہوں۔ تم کچھ دِن مزید ہمسائیوں کی کنگھی سے گزارا کرو، جب پیسے ہونگے تو لے آونگا۔۔۔!” بیوی اپنے شوہر کی مجبوری کو سمجھ رہی

‎تھی اِس لیے زیادہ تکرار نہیں کیا۔

‎کسان نے اُس وقت تو بیوی کو چپ کروا دیا، لیکن پھر اندر ہی اندر اپنے آپ کو کوسنے لگا کہ، میں بھی کتنا بدبخت ہوں کہ اپنی بیگم کی ایک چھوٹی سی خواہش بھی پوری نہیں کر سکتا۔ دوسرے دِن کھیتوں سے واپسی پر کسان ایک گھڑیوں کی دُکان پر گیا اور اپنی ٹوٹی ہوئی گھڑی اونے پونے داموں بیچی اور اُس سے ملنے والے پیسوں سے ایک اچھی سی کنگھی خریدی اور بڑی راز داری سے چھپا کر گھر کی طرف روانہ ہوا۔

‎اُس نے سوچا گھر جا کر بیوی کو سرپرائز دونگا تو وہ بہت خوش ہوگی۔ جب وہ گھر گیا تو کیا دیکھا اُسکی بیوی نے اپنے لمبے بال کٹوا دئیے تھے۔ اور مسکراتے ہوئے اُسکی طرف دیکھ رہی تھی۔ کسان نے حیرت سے پوچھا، “بیگم! یہ کیا کیا تم نے اپنے بال کیوں کٹوا دئیے، پتہ ہے وہ تمہارے اُوپر کتنے خوبصورت لگتے تھے۔۔۔؟”

‎بیگم بولی، “میرے سرتاج! کل جب آپ نے کہا کہ آپکے پاس گھڑی ٹھیک کروانے کے پیسے بھی نہیں ہیں تو میں بہت افسردہ ہو گئی۔ چنانچہ آج میں قریب کے بیوٹی پارلر پر گئی تھی، وہاں اپنے بال بیچ کر آپکے لیے یہ ایک گھڑی لائی ہوں۔۔۔!” جب کسان نے اُسے کنگھی دیکھائی تو فرطِ جذبات میں دونوں کی آنکھیں نم ہو گئیں.

‎محبت صرف کچھ دینے اور لینے کو ہی نہیں کہتے، بلکہ محبت ایک قربانی اور ایثار کا نام ہے جس میں اکثر اپنی خواہشات اور جذبات کو صرف اِس لیے قربان کر دیا جاتا ہے تاکہ رشتوں کا تقدس اور احترام برقرار رہے۔