اے مُشک بہ زنبر فشاں، پہ کہ نسیمِ صبح دم
اے چارہ گر عیسیٰ نفس، اے مونسِ بیمارِ غم
اے قاسدِ فرخُندہ پہ، تجھ کو اُسی گل کی قسم
اِنّ الدّیارِ حس صباح یا من الا ارض الحرم
بلِّغ سلامی روضَتن فی ھن نبی المحترم

اے مُشک بہ زنبر فشاں، پہ کہ نسیمِ صبح دم
اے چارہ گر عیسیٰ نفس، اے مونسِ بیمارِ غم
اے قاسدِ فرخُندہ پہ، تجھ کو اُسی گل کی قسم
اِنّ الدّیارِ حس صباح یا من الا ارض الحرم
بلِّغ سلامی روضَتن فی ھن نبی المحترم

Show your support

Clapping shows how much you appreciated Peer Abu Hamid’s story.