دو اور دو چار ھوتا نہیں

حساب سےپیار ھوتا نہیں

مرض عشق ھے ایسی بلا

ٹھیک وہ بیمار ھوتا نہیں

پھیلا ھے رنگ لہو چارسو

سرخ موسم بہارھوتا نہیں

بہت دیر کردی اقرار کرتے

وصال. سر دار ھوتا نہیں

خاموشی لاکھ سونا سہی

بن بولےمگراظہارھوتا نہیں

بہت جو جتاۓ پیار تم سے

جانوقابل اعتبار ھوتا نہیں

Like what you read? Give Mohammad Waseem a round of applause.

From a quick cheer to a standing ovation, clap to show how much you enjoyed this story.