Another Poem

جدائیوں کے غم میں شائد. میں بدل رھا ھوں

خدا ھے. نہ تو ھے راہ. برزخ پہ چل رھا ھوں

مجھے. بچانے والو. میری کوئ دوا نہیں ھے

کہ میں اپنی. ھی آگ. میں خود جل رھا ھوں

ھے روشنی میری زیست میں. تو ترے دم سے

تو سورج ھے تو پھر میں کیوں ڈھل رھا ھوں

پروانہ پوچھے ھے شمع سے ھر رات یہ سوال

کیوں مانند موم نۓ سانچےمیں ڈھل رھا ھوں

گردش ایام کچھ تیز ھے ایسی کہ جانتا نہیں

گر چکا ھوں. میں کہ گر کہ سنبھل رھا ھوں

Show your support

Clapping shows how much you appreciated Mohammad Waseem’s story.